September 23rd, 2019 (1441محرم23)

یوم عاشورہ کی فضیلت احادیث اور تاریخ کے آئینے میں

ڈاکٹر محمد اسلم فہیم

قرآن مجید میں ارشاد باری تعالیٰ ہے

﴿إِنَّ عِدَّةَ الشُّهورِ‌ عِندَ اللَّهِ اثنا عَشَرَ‌ شَهرً‌ا فى كِتـٰبِ اللَّهِ يَومَ خَلَقَ السَّمـٰو‌ٰتِ وَالأَر‌ضَمِنها أَر‌بَعَةٌ حُرُ‌مٌ ۚ ذ‌ٰلِكَ الدّينُ القَيِّمُ ۚ فَلا تَظلِموا فيهِنَّ أَنفُسَكُم….٣٦ ﴾…… سورة التوبة ترجمہ: ”بے شک شریعت میں مہینوں کی تعداد ابتداء آفرینش سے ہی اللہ تعالیٰ کے ہاں بارہ ہے۔ ان میں چار حرمت کے مہینے ہیں۔ یہی مستقل ضابطہ ہے تو ان مہینوں میں(ناحق قتل) سے اپنی جانوں پر ظلم نہ کرو‘‘

رسول اللہ نے ایامِ تشریق میں مقامِ منیٰ میں حجة الوداع کے موقع پر خطبہ دیتے ہوئے ارشاد فرمایا: لوگو! زمانہ گھوم پھر کر آج پھر اسی نقطہ پر آگیا ہے جیسا کہ اس دن تھا جب کہ اللہ نے زمین و آسمان کی تخلیق فرمائی تھی۔ سن لو، سال میں بارہ مہینے ہیں جن میں چارحرمت والے ہیں، وہ ہیں: ’’ذوالقعدہ، ذوالحجہ ، محرم اور رجب‘‘۔

حضرت قتادہؓ نے فرمایا: ’’ان مہینوں میں عمل صالح بہت ثواب رکھتا ہے اور ان مہینوں میں ظلم و زیادتی بہت بڑا گناہ ہے‘‘۔

ماہِ محرم میں روزوں کی فضیلت کے متعلق اگرچہ عمومی طور پر صحیح احادیث وارد ہیں لیکن خصوصی طور پر ’یومِ عاشورہ‘ یعنی دس محرم کے روزے کے متعلق کثرت سے احادیث آئی ہیں جن سے اس دن کے روزہ کی فضیلت واضح ہوتی ہے۔ اس سلسلے میں وارد احادیث ملاحظہ فرمائیں:

ابوقتادہؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ سے عاشورہ کے روزہ کی فضلیت کے متعلق دریافت کیا گیا تو آپ نے فرمایا کہ ’’اس سے ایک سال گذشتہ کے گناہ معاف ہوجاتے ہیں‘‘۔ (مسلم: ج۱،ص ۳۶۸)

حضرت عبداللہ بن عباس ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ جب مدینہ منورہ تشریف لائے تو قومِ یہود کو عاشورہ کے دن کا روزہ رکھتے ہوئے پایا۔ جناب رسالت ِمآب صلی اللہ علیہ وسلم نے دریافت فرمایا کہ یہ کون سا دن ہے جس کا تم روزہ رکھتے ہو؟ انہوں نے کہا کہ یہ بڑا عظیم دن ہے۔ اس میں اللہ تعالیٰ نے موسیٰ اور ان کی قوم کو نجات دی تھی اور فرعون اور اس کی قوم کوغرق کیا تھا۔ اس پر موسیٰ ؑ نے اس دن شکر کا روزہ رکھا پس ہم بھی ان کی اتباع میں اس دن کا روزہ رکھتے ہیں۔ یہ سن کر رسول اللہ نے فرمایا کہ ہم تمہاری نسبت حضرت موسیٰ ؑ کے زیادہ قریب اور حقدار ہیں۔ سو رسول اللہ نے خود روزہ رکھا اور صحابہؓ کو روزہ رکھنے کا حکم فرمایا‘‘۔ (مشکوٰة المصابیح، ص:۱۸۰

ایک روایت میں ذکر ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا کہ” یہود دس محرم کا روزہ رکھتے ہیں۔ تم ان کی مخالفت کرو اور اس کے ساتھ نو تاریخ کا روزہ بھی رکھو‘‘۔

یوم عاشورہ یعنی دس محرم کے حوالے سے بہت سی باتیں مشہور ہیں مثلاً

یہی وہ دن ہے جس میں اللہ نے حضرت آدم ؑ کی توبہ قبول کی۔

یہی وہ دن ہے جس میں اللہ نے حضرت ادریسؑ کو بلند درجات عطا فرمائے۔

یہی وہ دن ہے جس میں اللہ نے حضرت ابراہیمؑ کو آتش نمرود سے نجات دی۔

یہی وہ دن ہے جس میں اللہ نے حضرت نوحؑ کو کشتی پر سے اتارا۔

یہی وہ دن ہے جس میں اللہ نے حضرت موسٰیؑ پر تورات نازل کی۔

یہی وہ دن ہے جس میں اللہ نے اسمٰعیلؑ کو ذبح کرنے کی بجائے دنبے کا فدیہ دیا تھا۔

اس دن اللہ نے حضرت یوسفؑ کو جیل سے چھٹکارا دلایا تھا۔

اسی دن اللہ نے حضرت یعقوبؑ کو ان کی قوتِ بینائی واپس کی تھی۔

اس دن اللہ نے حضرت ایوبؑ سے مصیبتیں اور پریشانیاں دور کی تھیں۔

اسی دن اللہ نے حضرت یونسؑ کو مچھلی کے پیٹ سے نکالا تھا۔

اسی دن اللہ نے دریا کو چیر کر بنی اسرائیل کے لیے راستہ بنایا تھا۔

اسی دن حضرت موسیؑ نے دریائے نیل عبور کیا تھا۔

اسی دن حضرت یونسؑ کی قوم کو توبہ کرنے کی توفیق ہوئی تھی۔

لیکن یہ سب باتیں کسی صحیح روایت سے ثابت نہیں سوائے اس کے کہ حضرت موسٰی علیہ السلام اور ان کی قوم کو فرعون کے ظلم و ستم سے نجات ملی۔

سیّدنا حسین ؓ اس حوالے سے خوش قسمت ہیں کہ ان کو شہادت کے لئے ایک ایسا دن نصیب ہوا جو تاریخِ عالم میں پہلے ہی سے مقدس اور بابرکت گردانا جاتا تھا۔