June 2nd, 2020 (1441شوال10)

یتیموں کی کفالت , پرورش اور ان کے ساتھ حسن سلوک صدقہ جاریہ ہے .دردانہ صدیقی

 اسلام ایک مکمل ضابطہ حیات ہے جس میں یتیموں کی بہتر پرورش اور کفالت پر خصوصی زور دیا گیا ہے .اپنی اولاد کی طرح یتیم کی کفالت اور اپنی استطاعت کے مطابق یتیم کی تعلیم و تربیت کے اخراجات برداشت کرنے کی تلقین کی گئ ہے .اس کے ساتھ ساتھ یتیم بچوں کا مستقبل محفوظ بنانے کی ضرورت ہے تاکہ ان کو وطن عزیز کے کارآمد اور بامقصد شہری بنایا جا سکے . .یہ بات حلقہ خواتین  جماعت اسلامی پاکستان کی سیکرٹری حنرل دردانہ صدیقی نے یوم یتامی کے موقع پر اپنے خصوصی  بیان میں کہی . انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان میں اس وقت 42 لاکھ بچے یتیم ہیں .اور ان میں اکثریت ایسے بچوں کی ہے جنہیں خوراک , صحت اور تعلیم اور تربیت کی مناسب سہولیات میسر نہیں ہیں . ہمارے نبی محترم صلی اللہ علیہ وسلم خود ایک در یتیم تھے . آپ نے فرمایا : "جس نے کسی یتیم کے سر پر شفقت کا ہاتھ رکھا , اس کے ہاتھ کے نیچے آنے والے بالوں کے برابر نیکیاں اس کے حق میں  لکھ دی جائیں گی ." 15 رمضان .یوم یتامی کے موقع پر یہ عہد کریں کہ معاشرے میں موجود یتیم بے سہارا بچے کسی اور کی نہیں , میری اور آپ کی ذمہ داری ہے .پاکستان آرفنز کئیر فورسز کے تحت الخدمت فاؤنڈیشن ملک بھر میں یتیم بچوں کی کفالت اور فلاح وبہبود کے لئے کام کر رہی ہے .رمضان ہمدردی اور غم خواری  کا مہینہ ہے . ہمیں الخدمت فاؤنڈیشن کا دست تعاون بنتے ہوئے یتیموں کی کفالت کے اس پراجیکٹ کا حصہ بنیں جو ہمارے لئےجنت کے حصول اور نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی رفاقت حاصل کرنے کاآسان ترین ذریعہ ہے .